Saturday, 04.29.2017, 12:34am (GMT+1)
  مرکزی صفحہ
  سوالات
  آر ایس ایس
  روابط
  سائیٹ کا نقشہ
  رابطہ
 
[Advance Search] ::| Keyword:      
تعلیم سے گریز، مسلمانوں کی بے حسی! ; ڈینش نہ بولنے والے مشتبہ غیر ملکیوں کی نشاندھی کی جائے! ڈینش وزیر انٹگریشن ; ڈنمارک: ’’ Helping Humanity‘‘تنظیم کی تقریب ; ڈنمارک: مسلمانوں کو نیچی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے! ; ڈنمارک: مردوں کے مقابلے میں عورتیں زیادہ وفادار مسلمان ہیں
 
All News  
  خبریں (News)
  کالم (Columns)
  یورپ
  اداریہ (Editorial)
  متفرقات (Misc:)
  مضامین (Articles)
  ادبیات
  تقریبات
  یورپ میں پاکستانی
  ::| Newsletter
Your Name:
Your Email:
 
 
 
مضامین (Articles)
 
کلام میر میں مقطعات کا مطالعہ
Tuesday, 02.28.2012, 10:09pm (GMT+1)

کلام میر ؔ میں مقطعات کا مطالعہ

کلیم احسان بٹ

اسسٹنٹ پروفیسر شعبہ اردو

گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج راولپنڈی

ناصر کاظمی نے میر کے کلام کا ایک انتخاب کیا تھاجو ٢٠٠١ میں'' انتخاب میر'' کے نام سے جہانگیر پرنٹر نے چھاپا تھا ۔گذشتہ دنوں اس انتخاب کو دیکھ رہا تھا ۔ مطالعہ کے دوران میں مجھے احسا س ہوا کہ ناصر نے میر کی غزلوں کے مقطعات کو اکثر شامل انتخاب کیا ہے اور بعض اوقات تو پوری غزل میں سے صرف مقطع ہی انتخاب کیا ہے۔اس انتخاب نے مجھے مائل کیا کہ میں میر کے کلام میں صرف مقطعات کا از سر نو مطالعہ کروں اور دیکھوں کہ آخر میرکے مقطعات میں ایسی کون سی بات ہے جس کی بنا پر وہ انتخاب ٹھہرتے ہیں۔

مقطع کی تعریف جو بالعموم کی جاتی ہے اس کے مطابق''غزل یا قصیدہ کا ایسا آخری شعر جس میں شاعر اپنا تخلص استعمال کرتا ہے مقطع کہلاتا ہے''یعنی جس آخری شعر میں شاعر تخلص استعمال نہ کر ے وہ مقطع نہیں اسی طرح آخری شعر کے علاوہ اگر شاعر اپنے تخلص کا کہیں استعمال کرے تو وہ بھی مقطع نہیں کہلائے گا ۔

میر نے بعض اوقات مقطع کی بجائے مطلع میں ہی اپنے تخلص کا استعمال کیا ہے ۔اس کی مثال میں میر کے کئی مقبول مقطلعات پیش کیے جا سکتے ہیں، ملاحظہ کیجیئے :

 پھر  موج  ِ  ہوا   پیچاں    اے   میر     نظر    آئی

شاید    کہ     بہار     آئی    زنجیر    نظر    آئی

 

 ہم    ہوئے     ،   تم   ہوئے   کہ   میر    ہوئے

اس    کی    زلفوں     کے    سب    اسیر   ہوئے

 

شاید میر نے دیگر اشعار میں بھی کبھی اپنا تخلص استعمال کیا ہو مگر میری نظر سے میر کا کوئی ایسا شعر نہیں گزرا ۔اس غرض کے لیے میر کے سارے کلام کا بغور مطالعہ کرنا پڑے گا۔ میرے پیش نظر اس وقت صرف'' انتخاب میر'' ہے جس میں ایسا کوئی شعر موجود نہیں ہے جو مطلع یا مقطع نہ ہو اور اس میں میر نے اپنا تخلص استعمال کیا ہو۔

میر کے مقطعات کے سرسری مطالعہ سے بھی ایک فوری نتیجہ حاصل ہو سکتا ہے کہ ان کے اکثر مقطعات مکالمہ کی صورت ہیں۔یوں تو میر کے کلام میں مکالمہ کثرت کے ساتھ موجو دہے لیکن مقطعات اس لحاظ سے خصوصی اہمیت کے حامل ہیں۔میر کے مقطعات میں مکالمے کا استعمال نہ صرف کثیر ہے بلکہ اس کی ابعاد بھی مختلف و متنوع ہیں۔

مکالمہ کی ایک شکل خود کلامی ہے۔ شاعر اپنے آپ سے ہم کلام ہوتا ہے ۔مکالمہ کی یہ شکل مقطعات میں عام ہے ۔میر کے ہاںبھی مکالمے کی یہ عمومی سطح موجود ہے۔میر کے اس نوع کے مقطعات کی دو اقسام ہیں۔ایک جہاں صیغہ واحد متکلم استعما ل ہوا ہے دوسرا جہاں صیغہ جمع متکلم استعمال ہو اہے ۔مثلا

اگرچہ   گوشہ   گزیں   ہوں   میں   شاعروں   میں   میر

 پہ      میرے    شور    نے    روئے   سخن    تمام     لیا (واحد متکلم)۔

 

وہ    جو    خنجر    بکف     نظر      آیا

 میر     سو    جان     سے     نثار    ہوا      (واحد متکلم)۔

 

جن      بلائوں    کو     میر    سنتے      تھے

ان    کو      اس     روزگار     میں    دیکھا   (جمع متکلم)۔

 

اب    تو    جاتے    ہیں    بت   کدے  سے    میر

پھر       ملیں       گے         اگر     خد ا       لایا  (جمع متکلم)۔

 

 ہیں   مشت  ِ  خاک   لیکن   جو  کچھ  ہیں  میر  ہم    ہیں

مقدور        سے      زیادہ     مقدور       ہے     ہمار ا  (جمع متکلم )۔

 

تھا    وہ     تو  حور ِ    رشکِ   بہشتی   ہمیں   میں    میر

 سمجھے     نہ    ہم   تو    فہم    کا    اپنی    قصور    تھا   (جمع متکلم)۔

                     

جمع متکلم کا استعمال زیادہ ہے۔ایک تو میر کی خود پسند ی اور شاعرانہ عظمت کا احساس انہیں صیغہ جمع متکلم استعمال کرنے پر مجبور کرتا ہے دوسر ا جمع متکلم کے استعمال سے قاری بھی شریکِ واحد متکلم ہو جاتا ہے اور یہی فن کارانہ ہنر ہے جس سے قاری کی دلچسپی شعر میں بڑھ جاتی ہے اور شاعری اس کے لیے حدیث دیگراں نہیں رہتی۔

مکالمہ کی دوسری صورت ہے کہ کسی دوسرے سے ہم کلام ہوا جائے۔یوں تو شاعر کا سارا کلام ہی قاری سے ایک قسم کا مکالمہ ہی ہوتاہے لیکن جب شاعر کسی کو مخاطب کر کے شعر کہتا ہے تو مکالمے کی متذکرہ شکل پیدا ہوتی ہے۔میر کے مقطعات میں مکالمے کی اس شکل کا تناسب سب سے زیادہ ہے ۔اس قسم کے مکالمے کی شکلیں بھی ایک سے زیادہ ہیں۔

بعض مقطعات میں میر اپنے ہی جیسے کسی دوسرے ذی روح سے تخاطب اختیار کرتے ہیں۔

 

میر  کے   دین   و   مذہب  کا   کیا   پوچھتے   ہو   ؟   ان  نے   تو

قشقہ    کھینچا    ،    دیر   میں   بیٹھا  ،   کب  کا  ترک  اسلام  کیا

                     

بعض اوقات پرند چرند سے مکالمہ ہے

                                                                

مارا   گیا    خرام  ِ   بتاں    پر   سفر   میں    میر

اے   کبک   کہتا   جائیو   اس  کے   وطن  تلک

 

بعض مقامات پر بادِ صبا یا دوسرے مظاہر فطرت سے مکالمہ ہے

 

 کبھو  جائے  گی  جو  ادھر  صبا  تو   یہ  کہیو   اس  سے  کہ  بے   وفا

 مگر    ایک    میرِ   شکستہ    پا    تیرے    باغ  ِ   تازہ  میں  خار  تھا

 

 میر     آوار ہ  ِ   عالم    جو    سنا    ہے    تو     نے

 خاک    آلودہ   وہ    اے   بادِ   صبا  میں  ہی   ہوں

 

بعض اوقات کسی دوسرے کو اپنے آپ سے مکالمہ پر ابھارتے ہیں

 

 پوچھو    تو     میر   سے   کیا   کوئی   نظر   پڑا   ہے

چہر ہ   اتر   رہا   ہے   کچھ    اس   جوا ں    کا    آج

 

مقطع میں بعض اوقات میر اپنے آپ کو کوئی دوسرا فرض کر کے میر سے مکالمہ کرتے ہیں۔مکالمہ کی یہ صورت دوسرے شاعروں کے ہاں بہت کم یاب ہے لیکن میر کے ہاں کثرت سے ملے گی۔

قامت   خمیدہ    ،    رنگ   شکستہ   ،    بدن    نزار

 تیرا    تو    میر   غم    میں    عجب    حال  ہو  گیا

 

لیتے   ہی   نام   اس   کا   سوتے  سے  چونک  اٹھے   ہو

 ہے   خیر  میر   صاحب   کچھ   تم    نے   خواب  دیکھا

 

یاد   اس   کی    اتنی    خوب    نہیں    میر    باز    آ

 نادان   پھر    وہ    جی    سے    بھلایا    نہ   جائے  گا

 

میر    صاحب     زمانہ      نازک     ہے

دونوں     ہاتھو ں     سے     تھامئے    دستار

 

سمجھے   تھے   ہم   تو   میر   کو   عاشق   اسی   گھڑی

جب  سن  کے    تیرا   نام    وہ    بے   تاب  سا  ہوا

                     

مکالمہ کی ایک اور صورت میر کے ہاں دستیاب ہے۔میر یہاں موضوع سخن تو ہیں لیکن مکالمہ اور اصحاب کے درمیان ہے۔

 

لگا    نہ    دل   کو   کہیں    کیا    سنا    نہیں    تو    نے

و   کچھ   کہ   میر   کا     اس   عاشقی    نے    حال  کیا

 

 میر     صاحب     رلا     گئے     ہم    کو

 کل   و ہ   تشریف    یاں    بھی   لائے   تھے

 

گلی   میں   اس   کی   گیا   ،   سو   گیا  ،  نہ    بولا   پھر

 میں    میر   ،   میر   کر    اس   کو    بہت    پکار    رہا

 

 سرہانے    میر     کے   کوئی    نہ    بولو

ابھی   ٹک   روتے   روتے  سو  گیا  ہے

 

بعض اوقات میر خود بھی اس منظر کا حصہ ہیں

 

میرا    شور   سن   کے   جو  لوگوں  نے  کیا  پوچھنا   تو  کہے   ہے  کیا

جسے   میر    کہتے   ہو    صاحبو    !    یہ   وہی   تو   خانہ   خراب   ہے

 

میر نے بہت سے مقطعات میں خود اپنی عظمت کا اعتراف کیا ہے ۔کبھی وہ کسی دوسرے کی زبان سے اپنی عظمت کا اظہار کرواتے ہیں  اور کبھی اہل فن کو قائل کرتے ہیں کہ وہ میر کے فن کی عظمت کا اعتراف کریں۔

 

 ریختہ    خو ب    ہی    کہتا    ہے    جو    انصاف    کریں

چاہیے       اہل ِ     سخن       میر     کو      استاد    کریں

 ریختہ    رتبے   کو     پہنچایا       ہوا    ا  س    کا      ہے

معتقد     کون      نہیں     میر     کی      استادی     کا

 

 گر    دیکھو    تم    طرز ِ   کلام    اس    کی  نظر   کر

اے    اہل  ِ  سخن    میر    کو     استاد     کرو     گے

 

سطور بالا میں میر کے مقطعات کی صرف ایک خوبی '' مکالمہ او ر اس کی مختلف ابعاد'' کو موضوع بحث بنایا گیا ہے ۔میر کے مقطعات میں اس کے ساتھ کئی دوسری فنی و معنوی خوبیا ں بھی موجود ہیں ۔اس مضمون میں طوالت سے بچنے کی خاطر مقطعات میں موجودبیان و بدیع اور دوسری خوبیوں کا تذکرہ نہیںکیا گیا ۔

میر بجا طور پر شہنشاہ سخن ہیں۔ صاحب مراة الشعر نے شعر کی خوبیوں کے بیان میں بالعموم سودا ،غالب اور ذوق کے اشعار نقل کیے ہیں اور میر کے اشعار کو بہت سرسری لیا ہے  لیکن اپنی بات کے اختتام کے لیے میر کے ہی ایک مقطع کا انتخاب کیا ہے

 اب   تو    جاتے   ہیں    بت   کدے    سے     میر

پھر       ملیں      گے        اگر       خدا         لایا

 

اس سے میر کے مقطعات کی فنی قوت کا اندازہ ہو جاتا ہے کہ میر سے بچنے کی کوشش کرنے والا بھی اس کے قوت کے سامنے ہتھیار ڈال دیتا ہے۔

 

 

کلیم احسان بٹ

اسسٹنٹ پروفیسر شعبہ اردو

گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج راولپنڈی

 

  

 


Comments (0)        Print        Tell friend        Top


Other Articles:
یوم غالب کے حوالے سے ایک منفرد تحریر (02.14.2012)
حیرت باقی رہ جاتی ہے (02.10.2012)
شاہین مفتی ۔ ایک اساطیری شاعرہ (02.06.2012)
اردو شاعری کا ثمر جاوداں ۔ ناصر ملک (02.03.2012)
السلام علیکم، ڈنمارک (12.29.2011)
ڈنمارک ۔ ایک ”عجیب“ملک (12.21.2011)
بچوں کا ادب ۔ سہ ماہی ادبیات کا خصوصی نمبر (11.27.2011)
محمد منشا یاد ۔ حیات و ادبی خدمات (11.04.2011)
نصرت بھٹو بھی تاریخ کا حصہ بن گئیں (10.25.2011)
یوسف جاوید کی' بکھری یادیں' (10.04.2011)



 
  ::| Events
April 2017  
Su Mo Tu We Th Fr Sa
            1
2 3 4 5 6 7 8
9 10 11 12 13 14 15
16 17 18 19 20 21 22
23 24 25 26 27 28 29
30            
 

 Huma Nasar  : Editor
[Top Page]